Make your own free website on Tripod.com

1۔ ا اللّٰہ دِل رتّا میرا

ا اللّٰہ دِل رتّا میرا
مینوں ب دی خبر نہ کائ
ب پڑھیاں کُجھ سمجھ نہ آوے
ا دی لزّت آئ
ع تے غ دا فرق نہ جاناں
ایہ گل ا سُجھائ
بُلھیا! قَول ا دے پُورے
جیہڑے دِل دِی کرن صفائ

دوہڑہ
جیسی صُورت ع دِی، وَیسی صُورت غ
اِک نُقطے دا فرق ہَے: بھُلی پھِرے کَونَین

فرھنگ

ا : مُراد اللّٰہ۔ ذاتِ واحد
ب : بغیر اللّٰہ۔ اللّٰہ کے سوا۔ اللّٰہ کے سوا جو کچھ ہے، وہ سب غیر اللّٰہ ہے۔
رَتّا : خون جیسا۔ رنگ دار۔ سُرخ۔
ع : عین ذاتِ باری۔ خُداۓ مطعلق۔
غ : غیر اللّٰہ۔ اللّٰہ کے سوا۔
کَونَین : دُنیا و آخرت۔ دونوں جہان۔

---------------------------------------------

2۔ اب تو جاگ!

اب تو جاگ مُسافِر پیارے
رین گئ، لٹکے سب تارے

آوا گون، سرایئں ڈیرے
ساتھ تیّار، مُسافِر تیرے
اجے نہ سُنیئوں، کُوچ نقارے

اب تو جاگ مُسافِر پیارے

کر لے اَج کرنی دا ریرا
مُڑ نہ ہوسی، آوَن تیرا
ساتھی چلّو چّل پُکارے

اب تو جاگ مُسافِر پیارے

موتی، چُونی، پارس، پاسے
پاس سمندر، مرو پیاسے
کھول اَکّھیں، اُٹھ بوہ، بیکارے

اب تو جاگ مُسافِر پیارے

بُلھا! شَوہ دے پَیریں پڑیے
غفلت چھوڑ، کُجھ حِلہ کریے
بِرگ جَتَن، بن کھیت اُجاڑے

اب تو جاگ مُسافِر پیارے

فرھنگ:

رَین: رات۔ شب۔
لٹکے: ماند پڑ گۓ۔ روشنی منھم ہو گئ۔
اواگَون: آنا جانا۔
اواگَون سراۓ: وہ سراۓ یا مقام جہاں لوگ تھوڑی مّدت کے لیے قیام کر کے چلے جاتے ہیں۔ دُنیا۔
وَیرا: ویلہ۔ وقت۔
اُٹھ بَہو: جاگ جا۔ بیدار ہو جا۔
بیکارے: نکمّے۔ فضول۔
شَوہ: مالک۔ خصم۔ مُرشد۔ محبوب۔
مِرگ: ہرن۔
جَتَن: کوشِش۔ سعی۔

--------------------------------------------

3۔ اُٹھ جاگ!

اُٹھ جاگ گُھڑاڑے مار نہیں، ایہ سَون تِرے درکار نہیں
کِتّھے ہے سُلطان سِکندر؟ مَوت نہ چَھڈّے پغمبر
سَبّے چَھڈ چَھڈ گۓ اڈمبر، کوئ ایتھے بائدار نہیں
جو کُجھ کر سَیں، سو کُجھ پاسَیں، نہیں تے اوڑک پچّھوں تا سَیں
سُوِنجی کُونج ونگوں کُرلاسَیں، کھنباں باجھ اُڈار نہیں
بُلّھا! شَوہ بِن کوئ ناہیں، ایتھے اوتھے دوئیں سَرائیں
سنبھل سنبھل قدم ٹِکائیں، پھیر آوَن دُوجی وار نہیں
اُٹھ جاگ گُھڑاڑے مار نہیں، ایہ سَون تِرے درکار نہیں

فرھنگ:

گُھڑاڑے: خرّاٹے، جو نیند میں اِنسان لیتا ہے۔
سَون: نیند۔ خواب۔
اڈمبرا: غُرور، تکبّر۔
پائدار: مضبُوط۔ مُستحکم۔
سُوِنجی (سنجی): اُداس۔ ریران۔ اکیلی۔
کنبھ (کھمب): پَر۔ پرندے کے پَر۔
دوئیں سَرائیں: دونوں جہاں۔ دُنیا و آخرت۔

----------------------------------------------------

4۔ آپے پائِیاں کُنڈِیاں

آپے پائِیاں کُنڈِیاں، تے آپے کھنچائیں ڈور
ساڈے وَل مُکھڑا موڑ
عرش کُرسی تے بانگاں مِلیاں، مکّے پے گیا شور
بُلھے شاہ! اَساں مرنا ناہیں، مر جاوے کوئ ہور
ساڈے وَل مُکھڑا موڑ

4۔ا۔ آئ رُت شگوفیاں والی، چِڑیاں چُگّن آئِیاں
اِکناں نُوں جُرّیاں پَھڑ کھاہدا، اِکناں پھاہیں لائیاں
اِکنں آس مُڑن دی آہے، اِک سِیخ کباب چڑھائِیاں
بُلھے شاہ! کیہ وسّ اُنھاں دا جو مار تقدیر پھسائِیاں

فرھنگ:

دُنڈی: شکار کو پھانسنے کا اوزار۔ پھانسنے والی۔
جُریاں: شکاری پرندے۔ شکرا۔ باز وغیرہ۔
پھاہی: جال۔ دام۔
آس: اُمّید۔
مُڑن: واپس لَوٹنا۔
پھسائِیاں: جال میں قابو کر لیں۔

---------------------------------------------------

5۔ اپنا دسّ ٹِکانا

اپنا دسّ ٹِکانا، کِدھروں آیا، کِدّھر جانا؟

جِس ٹھانے دا مان کریں توں
اوہنے تیرے نال نہ جانا

ظُلم کریں تے لوک ستاویں
کَسَب پھڑیو لُٹ کھانا

کر لَے چاوَڑ چار دیہاڑے
اوڑک تُوں اُٹھ جانا

شہر خموشاں دے چل وَسّیے
جِتّھے مُلک سمانا

بَھر بَھر پُور لنگھاوے، ڈاہڈا
مَلکُ الموت مُہانا

ایہناں سَبھناں تھیں ہے بُلّھا
اَو گَنہار پُرانا

اپنا دسّ ٹِکانا، کِدھروں آیا، کِدّھر جانا؟

فرھنگ:

دسّ: بتا۔ بیان کر۔
ٹھانا: ٹھکانہ۔
چاوَڑ: موج بہار۔
وَسّیے: آباد ہو جائیں۔
مُلک: دُنیا۔
اوگنہَار: گناہگار۔ پاپی۔

--------------------------------------------

6۔ اپنے سنگ رَلائیں

اپنے سنگ رَلائیں پیارے! اپنے سنگ رَلائیں
راہ پَوَاں تے دھاڑے بیلے، جنگل، رُکھ، بلائیں
بگھن چیتے، چِت مچِتے، بِکھنے روکن راہِیں
تیرے پار جگادھر چڑپیا، کنڈھے لکّھ بَلائِیں
ہَول دِلے توں تھر تھر کَمبدا، بیڑا پار لنگھائِیں
بُلّھے شاہ نوں شوہ دا مُکھڑا، گُوِنگٹ کھول دِکھائِیں

اپنے سنگ رَلائیں پیارے! اپنے سنگ رَلائیں

6۔ا۔ اپنے تن خبر نہیں، ساجن دی خبر لیاوے کَون
نہ ہُوں خاکی، نہ ہُوں آتش، نہ پانی، نہ پَون
بُلّھیا! سائیں گُھٹ گُھٹ رنوّیاں، جِیوُں آٹے وِچ لَون

فرھنگ:

سَنگ: ساتھ
رَاہ پَواں: راستے پر چلوں۔
دھاڑے: غُرّاۓ۔ غصّہ کھاۓ۔ ظلم کرے۔
بگھن: بھیڑیے۔ درندے۔
جگادھر: بڑے۔ بہت بڑے۔
پَون: ہَوا۔
رنوّیاں: مِل جانا۔

-------------------------------------------

7۔ اُٹھ چلّے گوانڈھوں یار

اُٹھ چلّے گوانڈھوں یار
ربّا ہُن کِیہ کریے!

اُٹھ چلّے، ہُن رہندے ناہیں
ہویا ساتھ تیار

ربّا ہُن کِیہ کریے!

چاروں طرف چَلَن دے چرچے
ھر سُو پَئ پُکار

ربّا ہُن کِیہ کریے!

ڈھانڈ کلیجے بل بل اُٹھدی
بِن دیکھے دِیدار

ربّا ہُن کِیہ کریے!

بُلّھا! شَوہ پیارے باجھوں
رہے اُرار نہ پار

ربّا ہُن کِیہ کریے!

فرھنگ:

گوانڈھ: ہمسایہ۔ ہمسائیگی۔
ڈھانڈ: لَو۔ آگ کا شعلہ۔ لپک۔
اُرار: دریا کے اس طرف۔ وہ کنارا جِس پر اِنسان کھڑا ہو۔

-----------------------------------------

8۔ اِک الِف پڑھو

اِک الِف پڑھو، چُھٹکارا اے

اِک الفوں دو تِن چار ہوے
پِھر لکھ، کروڑ، ہزار ہوے
پِھر اوتھوں باجھ شُمار ہوے
ایس الف کا نُکتہ نیارا اے

کِیُوں ہویائیں، شکل جلاداں دی
کِیُوں پڑھنائیں، گَڈّھ کتاباں دی
سِر چانائیں پنڈ عزاباں دی
اَگّے پَینڈا مُشکِل بھارا اے

بن حافِظ حِفظ قُرآن کریں
پڑھ ھڑھ کے صاف زبان کریں
پر نِعمت وِچ دھیان کریں
من پِھردا دیُوں ہلکارا اے

اِک الِف پڑھو، چُھٹکارا اے

فرھنگ:

الف: (ا)۔ مُراد صرف ایک اللّہ کے نام کو یاد رکھو۔ بُلّھے شاہ کہتے ہیں (؟): اگر ایک الف سے بڑھیں تو ہزاروں لاکھوں نہیں، اربوں بن جاتے ہیں۔
نُکتہ نیارا: عجیب و غریب۔ انوکھا راز۔ پوشیدہ بات۔
کڈھ: نِکال
پَنڈ: بوجھ۔ گٹھڑ۔
چا: اُٹھا۔
سر چا نائِیں: سر پر بوجھ نہ رکھ۔
ہلکارا: ہرکارہ۔ جگہ جگہ پِھرنے والا۔ ڈاک لے جانے والا۔

------------------------------------------------------

9۔ اِک ٹُونا

اِک ٹُونا، اچنبا گاواں گی
میں رُٹّھا یار، مناواں گی

ایہ ٹُونا میں پڑھ پڑھ پُھوکاں
سُرج اگن جلاواں گی

اکّھیں کاجل، کالے بادل
بھواں سے آندہی لِیاواں گی

سَتّ سُمندر، دِل دے نادر
دِل سے لہر، اُٹھاواں گی

بِجلی ہو کر چمک ڈراواں
بادل ہو گرجاواں گی

عِشق انگیٹھی، ہر مل تارے
چاند سے کفن بناواں گی

لامکان کی پٹڑی اُوپر
بہ کر ناد بجاواں گی

لاۓ سوان میں شَوہ گل اپنے
تد میں نار کہاواں گی

اِک ٹُونا، اچنبا گاواں گی
میں رُٹّھا یار، مناواں گی

فرھنگ:

ٹُونا: جادُو۔ منتر۔ سِحر۔
اچنبا: انوکھا۔ عجیب و غریب۔
اگن: آگ۔ آتش۔
بھواں: پلکیں۔
بہ کر: بیٹھ کر۔
ناد: سنکھ۔ جو بجایا جاتا ہے۔
سوان: سو جاؤں۔
گَل: گلے۔ گردن۔
تد: پھر۔ اس کے بعد۔
نار: عورت۔ بیوی۔

--------------------------------------------------

10۔ امّاں بابے دی بھلیائ

امّاں بابے دی بھلیائ، اوہ ہُن کمّ اساڈے آئ

امّاں بابا چور دُھراں دے، بُتّر دی وڈیائ
دانے اُتّوں گُتّ بگُتّی، گَھر گَھر پَئ لڑائ
اساں قضیّے تاہیں جالے، جد کنک اُنھاں ڑرکائ
کھاۓ خیرا، تے پھاٹیے جُمّا، اُلٹی دستک لائ

امّاں بابے دی بھلیائ، اوہ ہُن کمّ اساڈے آئ

فرھنگ:

بھلیائ: نیکی۔ اچھے اعمال۔
دُھراں دے: ازل سے۔ ابدی۔
وڈیائ: فخر۔ تکبّر۔ مان۔
گُت بَگُتّی: لڑائ جگھڑا۔ عورتوں کی لڑائ جس میں ایک دُوسرے کے بال کھینچے جاتے ہیں۔
قضیۓ، جالے: مُصیبتیں اُتھائیں۔
کنک اُنھاں ڑُرکائ: جب آدم و خوّا نے گندم کا دانہ کھایا۔
کھاۓ خَیرا تے پھٹیے جُمّا: جرے کوئ بھرے کوئ۔

--------------------------------------------------------

11۔ اِک نقطے وِچ گل مُکدی اے

پھڑ نقطہ، چھوڑ حِساباں نوں
چھڈ دوزخ، گور عزاباں نوں
کر بند، کُفر دیاں باباں نوں
کر صاف دِلے دیاں خواباں نوں

گل ایسے گھر وِچ ڈُھکدی اے
اِک نقطے وِچ گل مُکدی اے

ایویں متّھا زمیں گھِسائ دا
پا لمّا محراب دِکھائ دا
پڑھ کلمہ لوک ہسائ دا
دِل اندر سمجپ نہ لائ دا

کدی سچّی بات وی لُکدی اے
اِک نقطے وِچ گل مُکدی اے

اِک جنگل، بحریں جاندے نیں
اِک دانہ روز دا کھاندے نیں
بے سمجھ وجود تھکاندے نیں

چلیاں اندر جِند سُکدی اے
اِک نقطے وِچ گل مُکدی اے

کئ حاجی بن بن آۓ جی
گل نیلے جامے پاۓ جی
حج ویچ، ٹکے لَے کھاۓ جی
پر ایہ گل کیہنوں بھاۓ جی

کِگے سچّی گل وی رُکدی اے
اِک نقطے وِچ گل مُکدی اے

دوہڑہ:

اُس کا مُکھ اِک جَوت ہے، کھونگٹ ہے سنسار
گھونگٹ میں وہ چھُپ گیا، مُکھ پر آنچل ڈار

فرھنگ:

نقطہ : صفر (0) جو تقسیم نہیں ہو سکتا۔ ناقابلِ تقسیم۔
گور : قبر۔
باباں : باب کی جمع۔ دروازے۔
ڈھکدی : ختم ہوتی ہے۔
متّھا : پیشانی۔ جبیں۔
لمّا محراب : ایک نِشان جو نمازیوں کے ماتھے پر پڑ جاتا ہے۔
بحریں : سمندر۔
چِلیاں : چلّہ۔ چالیس دن کی گوشہ نشینی، جس میں صرف خدا کو یاد کیا جاتا ہے۔
جِند : جان۔
مُکھ : چہرہ۔ منہ۔
جوت : چمک۔ روشنی۔
گھونگھٹ : پردہ۔ ملّو جو منہ پر ڈال کر اسے چھُپا لیا جاتا ہے۔ اوٹ۔
سنسار : زمانہ۔
آنچل ڈار: پلّا ڈال کر۔ منہ پر کپڑا ڈال کر۔

-----------------------------------------------------------

12۔ اُلٹے ہور زمانے آۓ

اُلٹے ہور زمانے آۓ، تاں مَیں بھیت سجں دے پاۓ

کاں، لگڑاں نوں مارن لگّے، چڑیاں، جُرّے ڈھاۓ
گھوڑے چُگن اوڑیاں تے، گدّوں خوید پواۓ

آپنیں وِچ اُلفت ناہیں، کیا چاچے، کیا تاۓ
پیو پُتراں اِتفاق نہ کائ، دھّیاں نال نہ ماۓ

سچّیاں نوں پۓ مِلدے دَھکّے، جُھٹے کول بہاۓ
اگلے ہو کنگالے بیٹھے، پچھلیاں فرش بِچھاۓ

بُھریاں والے راجے کیتے، راجیں بھیک منگاۓ
بُلّھیا! حُکم حضوروں آیا، تِس نوں کون ہٹاۓ

اُلٹے ہور زمانے آۓ، تاں مَیں بھیت سجں دے پاۓ

فرھنگ:

بھیت : بھید۔ راز۔
کاں : کوّے۔ زاغ۔
لگڑاں : لگڑ بھگڑ۔ درندے۔
جُرّے : شکرے۔ باز۔ شاہین۔
چُگن : کھائیں۔ چریں۔
اُروڑیاں : گندگی اور کوڑے کرکٹ کے ڈھیر۔
گدّوں : گدھوں۔
خوید : گندم اور جو کے وہ سبز پودے جن میں سٹا پیدا نہ ہوا ہو۔
کنگالے : غریب۔ محتاج۔ مسکین۔
فرش وِچھاۓ : نو دولتیوں کی طرف سے بے فیض۔ شان و شوکت کا اظہار۔
بھوریاں والے : کمبل پوش۔ فقیر۔ گداگر۔ لیکن بھوریاں والے ہو، تو بھوری اس نشانی کو کہتے ہیں جو بالوں کے ایک گول لچھے کی صورت میں ہو، اسے منحوس خیال کیا جاتا ہے۔

-------------------------------------------------------------------------------

13۔ آمِل یارا سارلَے!

آمِل یارا سارلَے، مِری جان دُکھاں نے گھیری!

اندر خوِاب وچھوڑا ہویا، خبر نہ پیندی تیری
سُنجی، بن وِچ لُٹّی سائیاں، چور شنگ نے گھیری

مُلاں قاضی راہ بتاون، دین دھرم دے پھیرے
ایہ تاں ٹھگ نیں جگ دے جھیور، لاون جال چوفیرے

کرم شرع دے دھرم باتون، سنگل پاون پیری
ذات مزہب ایہ عشق نہ پچھدا، عشق شرع دا ویری

ندیوں پار اے ملک سجن دا، لہر لوبھ نے گھیری
ستگوِر بیڑی پھڑی کھلوتے، تَیں کیوں لائیے دیری

بُلّھے شاہ! شَوہ تینوں مِلسی، دِل نوں دِہ دلیری
پیتم پاس، تے ٹولنا کِس نوں؟ بُھلّیوں شِکر دوپہری

فرھنگ:

سارلے : خبر لے۔ توجہ دے۔ دھیان کر۔
خبر نہ پیندی اے : اطلاع نہیں ملتی۔ کوئ خبر نہیں آتی۔
سُنجی : اکیلی۔ ویران۔
بَن : جنگل۔
سائیاں : اے مالک
چورشنگ : چور اور ڈاکو۔
جھیور : دانے بھوننے والا۔ پرندوں کا شکار کرنے والا۔ چڑی مار۔
چوفیرے : چاروں طرف۔
سنگل پاون : بیڑیاں ڈالیں۔
ویری : دشمن۔
لہر لوبھ : طمع اور ہوس کی موج، ہوا و ہوس۔ مکروہاتِ دنیا۔
ستگور : مُرشد۔
بیڑی : کشتی۔
شَوہ : مُرشد۔ محبوب۔ معشوق۔
پیتم : پیارا۔ محبوب۔ معشوق۔
ٹولنا : تلاش کرنا۔ ڈھونڈنا۔
بھلیوں : بھول گیا ہے۔
شکر دوپہری : عین دوپہر کے وقت جب کہ سورج نصفُ النّہار پر ہو۔

------------------------------------------------------------------------------

14۔ اب ہم اَیسے گُم ہوۓ

اب ہم ایسے گم ہوۓ، پریم نگر کے شھیر
اپنے آپ نوں سودھ رہے ہیں، نہ سِر، ہاتھ نہ پیر
کھوئ خودی اپنا پد چیتا، تب ہوئ گل خیر
بُلّھا، شوہ ہے دوہی جہانیں، کوئ نہ دِسدا غیر

فرھنگ:

پریم نگر : محبت کی بستی۔
سودھ : پاک صاف۔ خالی۔
پدچیتا : مقام حاصل کیا۔
گل خیر : اچّھی بات۔
دِسدا : دکھائ دیتا ہے۔

----------------------------------------------------------------------------

15۔ ایک حرف سی حرفی

آندیاں توں میں صدقڑے ہاں، جویں جاندیاں تو سِر وارنی ہاں
مِٹّھی پریت انوکھڑی لگ رہی، گھڑی پل نہ یار وسارنی ہاں
کیہے ہڈ تکاڈرے پئے مینوں، اَوندیاں پاوندی، کانگ اُڈارنی ہاں
بُلّھا! شوہ تے کملی میں ہوئ، سُتّی جاگدی یار پکارنی ہاں

فرھنگ:

صدقڑے ہاں : صدقے ہوتی ہوں۔
سروارنی ہاں : سر قربان کرتی ہوں۔
پریت : محبت۔
وِسارنی ہاں : بُھلا دیتی ہوں۔

-------------------------------------------------------------------------

16۔ بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

نہ مَیں مومن وِچ مسِیتاں
نہ مَیں وِچ کُفَر دِی رِیت آں
نہ مَیں پاکاں وِچ، پلیت آں
نہ مَیں مُوسٰے، نہ فرعون

بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

نہ مَیں وِچ پَلِیتی پاکی
نہ وِچ شادی، نہ غمناکی
نہ مَیں آبی، نہ مَیں خاکی
نہ مَیں آتش، نہ مَیں پَون

بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

نہ مَیں بھیت مَذَب دا پایا
نہ مَیں آدم حوّا جایا
نہ کُجھ اپنا نام دھرایا
نہ وِچ بیٹھن، نہ وِچ بَھون

بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

اوّل آخر آپ نُوں جاناں
نہ کوئ دُوجا ہور ھچھاناں
مَیتھوں وَدھ نہ کوئ سیاناں
نُلّھا! اَوہ کھڑا ہے کَون

بُلّھا! کِیہ جاناں میں کون؟

٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

چَل بُلّھا! چل اوتھے چلیے، جِتّھے سارے اَنّھے
نہ کوئ ساڈی ذات پچھانے، نہ کوئ سانُوں منّے

فرھنگ:

مسِیت : مسجد۔
رِیت : رسم و رواج۔
پلیت : پلید۔
پَون : ہَوا۔
جایا : اولاد۔ پیدا کیا ہوا۔
بیٹھن : بیٹھنا۔
بَھون : پِھرنا۔
پچھاناں : شناخت کرنا۔ پہچاننا۔
میتھوں : مجھ سے۔
وَدھ : زیادہ۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
اَوتھے : اُس جگہ۔
انّھے : نابینے۔ اندھے۔
منّے : تسلیم کرے۔ مانے۔ بزُرگی کا اعتراف کرے۔

---------------------------------------------------------------

17۔ بُلّھے نوں سمجھاون آئیاں

بُلّھے نوں سمجھاون آئیاں، بھیناں تے پھرجائیاں:

”مَن لے بُلّھیا ساڈا کہنا، چھڈ دے پلّا رائیاں
آلِ نبی اَولادِ علی نوں توں کیوں لِیکاں لائیاں؟”

”جیہڑا سانوں سَیّد سَدّے دوزخ مِلن سزائیاں
جو کوئ سانوں رائیں آکھے، بھشتی پینگاں پائیاں”

رائیں، سائیں سبھنی تھائیں، رب دیاں بے پروائیاں
سوہنیاں پرے ہٹائیاں، تے کوجھیاں لَے گل لائیاں

جے توں لوڑیں باغ بہاراں، چاکر ہو جا رائیاں
بُلّھے شاہ دی ذات کیہ پُچھنَئیں؟ شاکر ہو رضائیاں

فرھنگ:

پَلّا : دامن۔
رائیاں : ارائیں۔ ایک قوم۔ بُلّھے شاہ کے مرشد حضرت شاہ عنایت ارائیں تھے اور بُلّھا سّید۔ انھی کی طرف اشارہ ہے۔
لیکاں لائیاں : بد نام کیا۔
کوجھیاں : بد صُورت۔ جن میں کوئ گُن (خوبی یا وصف) نہ ہو۔
چاکر : غلام۔
رضائیاں : اللّہ کی رضا۔

-----------------------------------------------------------

18۔ بَھینا! مَیں کتدی کتدی ہُٹّی

بَھینا! مَیں کتدی کتدی ہُٹّی

پچّھی، پڑی پچھواڑے رہ گئی، ہتھ وِچ رہ گئی جُٹّی
اگّے چرخا، پِچّھے پیڑھا، میرے ہتّوں تند ترُٹّی
بھاندا بھاندا اور اڈگّا، چنب اُلجھی، تند ٹُٹّی
بھلا ہویا میرا چرخا ٹُٹّا، میری جِند عزابوں چھُٹّی
داج دہیج نُوں اُس کِیہ کرنا جِس پریم کٹوری مُٹّھی
بُلّھا! شوہ نے ناچ نچاۓ، دُھمّ پئی کر کُٹّی

بَھینا! مَیں کتدی کتدی ہُٹّی

دوہڑہ :

بھٹھ نمازاں، چِکّڑ روزے، کلمے پِھر گئی سیاھی
بُلّھے شاہ! شوہ اندروں مِلیا، بُھلّی پِھرے لوکائ

فرھنگ:

کتدی کتدی : چرخا کات کات کر۔
ہُٹّی : بہت تھک گئی ہوں۔
پچّھی : وہ ٹوکری جس میں کاتنے کا سامان رکھا جاتا ہے۔
جُٹّی : کاتتے کاتتے ایک پُونی کو دوسری پنی کے ملانے کو کہتے ہیں۔
تند : وہ دھاگا جو پونی کاتتے ہوۓ پونی سے نکلتا ہے۔
ترُٹّی : ٹوٹ گئی۔
اورا : وہ چرخی جس پر دھاگا لپیٹا جاتا ہے۔ اٹیرنا۔
ڈِگّا : گِر پڑا۔
چنب : چمڑے کی گول ٹکیہ جو تکلے کو سہارا دیتی ہے۔
چھُٹّی : رہا ہوئ۔ آزاد ہوئ۔
داج دہیج : جہیز کا سامان۔
پریم کٹوری : محبّت کا پیالہ۔
مُٹھی : ہاتھ میں۔
کرکُٹّی : ڈھول کی لَے کا تیز ہو جانا۔

دوہڑہ -
بھٹھ : تنور۔ بڑا تنور۔
چِکّڑ : مٹی اور پانی کے مِلنے کی کیفیت۔ کیچڑ۔
لوکائ : لوگ۔

----------------------------------------------

19۔ پاندھیا ہو!

جھب سُکھ دا سنیوھڑا لیا ہیں وے
پاندھیا ہو!
میں دُبڑی میں کُبڑی ہوئیاں
مِرے دُکھڑے سب بتلاویں وے
پاندھیا ہو!
”کُھلّی لِٹ گل، ہتّھ پراندا”
ایہ کہندیاں نہ شرماویں وے
پاندھیا ہو!
یاراں لِکھ کے کتابت بھیجی
سِسے گوشے بہ سمجھاویں وے
پاندھیا ہو!
بُلّھا! شَوہ دِیاں مُڑن مُہاراں
لَے پیتاں تُوں جھب دھاویں وے
پاندھیا ہو!

فرھنگ:

پاندھی : پاندھی۔ سفر کرنے والا۔ نامہ بر۔
جھب : جلدی۔
سنیوہڑا : پیغام۔
دُبڑی : پتلی۔
کُبڑی : کمر جُھک جانا۔
کُھلّی لِٹ : کُھلے ہوۓ سر کے بال۔
گوشے بہ : الگ جگہ جا کر۔ کرتے ہیں۔
کِتابت : محبّت نامہ۔
مُڑن : لَوٹ آئیں۔ واپس ہوں۔
مہاراں : باگیں۔
لَے : لے کر۔
پیتاں : جواب۔

-----------------------------------------------------------

20۔ پانی بھر بھر گئیاں سبّھے

پانی بھر بھر گئیاں سبّھے، آپو اپنی وار
اِک بھرن آئیاں، اِک بھر چّلیاں
اِک کھِلیاں نیں، بانھاں پَسار

ہار حمیلاں پائیاں گل وِچ، بانھ چھنکے چُوڑا
کنّیں بُک بُک جُھمر بالے، سب اڈمبر پُورا
مُڑ کے شَوہ نے جھات نہ پائ، اینویں گیا سِنگار

پانی بھر بھر گئیاں سبّھے، آپو اپنی وار

ہتھیں مہندی، پیریں مہندی، سِر تے دھڑی گُندھائ
تیل پھلیل، اناں دا بیڑہ، دندیں مِسّی لائ
کوئ جو سدّ پیونیں گُجّھی، وِسّریا گھر بار

پانی بھر بھر گئیاں سبّھے، آپو اپنی وار

بُلّھیاظ شَوہ دی پندھ پَویں جے، تاں تُوں راہ پچھانے
”پَون ستاراں!” پاسیوں منگیا، دا پیا ”تَرے کانے”
گونگی، ڈوری، کملی ہوئ، جان دی بازی ہار

پانی بھر بھر گئیاں سبّھے، آپو اپنی وار

فرھنگ:

کھلیاں : کھڑی ہیں۔
بانھاں پسار : بازو کھول کر۔
اڈمبر : آرائش و زیبائش۔ غرور۔ ناز۔
جھات نہ پائ : نظر نہ کی۔
اَینویں گیا سِنگار : زیب و زینت بے کار گئی۔
سّد پیونیں گجّھی : اندرونی چوٹ (گجّھی سٹ) دِل کی چوٹ۔
وسّر گیا : بھول گیا۔
شوہ دی پندھ : مُرشد کے راستے پر۔
پون ستاراں، ترے کانے : چوسر کے داؤ۔ کعبتین کے داؤ جن میں کبھی کامیابی اور کبھی ناکامی ہوتی ہے۔ پو باراں تِن کانے بھی کہتے ہیں۔
ڈوری : بہری جو سُن نہ سکے۔
کملی : جھلّی۔ دیوانی۔

-------------------------------------------------------------

21۔ پتیاں لِکھاں مَیں شام نُوں

پتیاں لِکھاں مَیں شام نُوں، مینُوں پیا نظر نہ آوے
آنگن بنا ڈراؤ، کِت بِدھ رَین وہاوے
پاندھے پنڈت جگت کے، میں پُوچھ رھی آں سارے
پوتھی بید کیا دوس ہے، جو اُلٹے بھاگ ہمارے
بھائیا وے جوتشیا! اِک سچّی بات وی کہیو
جے میں ہینی بھاگ دی، تم چُپ نہ رہیو
بھج سکّاں تے بھج جاواں، سب تج کے، کراں فقیری
پر دُلڑی، تُلڑی، چولڑی ہے، گل وِچ پریم زنجیری
نِیند گئی کِت دیس نُوں، اوہ بھی وَیرَن میری
مت سُفنے میں آن مِلے، اوہ نِیندر کیہڑی
رو رو جِیُو ولاندیاں، غم کرنی آں دُونا
نَینوں نِیر بھی نہ چَلّن، کِسے کِیتا ٹُونا
ساجن تُمری پِیت سے، مُجھ کو ہاتھ کیہ آیا
چھتر سُولاں سر جھا لیا، پر تیرا پنتھ نہ پایا
پریم نگر چل وَسّیے، جتّھے وسّے کنت ہمارا
بُلّھیا! شوہ توں منگنی ہاں، جے دے نظارا

فرھنگ:

شام : محبوب۔ معشوق۔ مرشد۔
پیا : محبوب۔ مُرشد۔
آنگن : صحن۔
کِت بِدھ : کس طرح۔
رَین : رات۔
پاندھے : نجومی۔ جوتشی۔
جگت : زمانہ۔
پوتھی بید : وید کی کتاب۔ نجوم کی کتاب۔
دوس : الزام۔
ہینی : بد نصیب۔ محروم۔ مد قسمت۔
بھج : دوڑ۔
تج کے : چھوڑ کے۔
دُلڑی۔ تلِڑی۔ چولڑی : دو لڑیوں والی۔ تین لڑیوں والی۔ چار لڑیوں والی۔
پریم زنجیری : محبت کی زنجیر۔
کِت : کس طرف۔ وَیرن : دُشمن۔
مت : شاید۔
سفنہ : خواب۔
جی ولانا : دل کو تسلّی دینا۔
نینوں : آنکھوں۔
نِیر : آنسُو۔
ٹونا : جادُو۔ سحر۔
ساجن : محبوب۔
تُمری پیت : تمھاری محبّت۔
چھتر سُولاں : کانٹوں کا چھتر۔
سِر جالیا : سر پر اُٹھا لیا۔
پنتھ : راستہ۔ راہ۔
پریم نگر : محبّت کا شہر۔
وَسّیے : آباد ہو جائیں۔
جتّھے : جہاں۔
وَسّے : آباد ہے۔ رہتا ہے۔
کنت : محبوب مُرشد۔ خاوند۔
منگنی ہاں : مانگتی ہُوں۔

---------------------------------------------------------------

22۔ تانگھ ماہی دی جلی آں

تانگ ماہی دی جلی آں

ادّھی رات، لٹکدے تارے، اِک لٹکے، اِک لٹکنہارے
میں اُٹھ آئ ندی کِنارے، پار لنگھن نُوں کھلی آں

نَیں چندن دے شور کِنارے، گُھمّن گھیر تے ٹھاں ٹھاں مارے
ڈُب ڈُب موۓ تارُو بھارے، شور کراں تے جَھلّی آں

نیں چندن دے ڈُونگھے پاہے، تارُو غوطے کھاندے آہے
ماہی مانڈھے پار سِدھاۓ، رہ گئی مَیں اِکلّی آں

میں من تارُو سار کِیہ جانا، وَنجھ، چپّا نہ، تُلہ پُرانا
گُھمّن گھیر نہ ٹانگھ ٹِکانا، رو رو چھاٹاں تلیاں

پار چنھاؤں جنگل بیلے، اوتھے خونی شیر بگھیلے
جھب رَبّ مینوں ماہی میلے، ایس فِکَر وِچ گلی آں

بُلّھا! شَوہ میرے گھر آوے، ہار سِنگار مِرے من بھاوے
مُنہ مُکّٹ، متّھے تِلک لگاوے : جے دیکھے تاں بھلی آں

تانگھ ماہے دِی جلی آں

فرھنگ:

تانگھ : آرزُو۔ خواہش۔ اِنتظار۔
ماہی : محبُوب۔
جلی آں : چل رہی ہوں۔
ادّھی رات : آدھی رات۔
لٹکدے تارے : تارے جو ماند پڑ گئے ہوں۔
لٹکن ہارے : ماند ہونے کے قریب۔
پار لنگھن : دریا کے پار جانا۔
کھلی آں : کھڑی ہوں۔
نیں چندن : دریاۓ چندن۔ چناب۔
گُھمّن گھیر : گرداب۔
ٹھاں بھاں مارے : موجیں مار رہا ہے۔
جھلّی : احمق۔ بے وقوف۔
ڈُونگھے : گہرے۔ عمیق۔
مانڈھے : میرے۔
تارُو : تیراک۔
سِدھاۓ : چلے گئے۔
اِکَلّی : اکیلی۔
من تارُو : تیرنا نہ جاننے والا۔
سار : بھید۔
ونجھ : ایک لمبا بانس جس سے کشتی کو چلاتے ہیں۔
چپّا : چپّو۔
تُلہ : لکڑیوں کا بیڑا۔ اس کے ذریعے بھی دریا پار کیا جاتا ہے۔
ٹانگھ ٹِکانا : بچاؤ کی صورت۔

--------------------------------------------------------------

23۔ توہیوں ہیں، میں ناہیں

توہیوں ہیں، میں ناہیں سجنا!
توہیوں ہیں، میں ناہیں!

کھولے دے پرچھاویں وانگُوں گُھوم رہیا من ناہیں
جے بولاں تُوں نالے بولیں، چُپ رَھواں من ناہیں
جے سَونواں تُوں نالے سَونویں، جے تُراں، تُوں راہیں
بُلّھیا! شوہ گھر آیا میرے، جندڑی گھول گھُمائیں

توہیوں ہیں، میں ناہیں سجنا!
توہیوں ہیں، میں ناہیں!

فرھنگ:

کھولا : پُرانی عمارت جس کی چھت نہ ہو۔ صرف دیواریں ہی ہوں۔
پرچھاواں : سایہ۔ بد رُوح۔

--------------------------------------------------------------

24۔ تیرے عشق نچائیاں

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

تیرے عشق نے ڈیرا میرے اندر کیتا
بھر کے زہر دا پیالہ، مَیں تاں آپے پیتا
جھب دے بَوھڑِیں سے طبیبا، نہیں تے میں مر گئِیّا

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

چُھب گیا وے سُورج، باہر رہ گئی آ لالی
وے میں صدقے ہوواں، دیویں مُڑ جے دکھالی
پیرا! میں بُھل گئیّاں تیرے نال نہ گِئیّا

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

ایس عشقے دے کولوں مینوں ہٹک نہ ماۓ
لاہُو جاندڑے میڑے، کیہڑا موڑ لِیاۓ
میری عقل جو بُھلّی، نال مھانیاں دے گئیّا

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

ایس عشقے دی جھنگی، وِچ مور بولِیندا
سانوں قِبلہ تے کعبہ، سوہنا یار دسِیندا
سانوں گھائل کر کے، پھیر خبر نہ لئیّا

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

بُلّھا! شَوہ نے آندا مینوں، نائت دے بُوہے
جِس نے مینوں پواۓ چولے، ساوے تے سُوہے
جاں مَیں ماری ہے اڈّی، مِل پیا ہے دھیّا

تیرے عشق نچائیاں کر کے تھیّا تھیّا!

دوہڑہ

اِٹّ کَھڑَکّے، دُکّڑ وجّے، تتّا ہووے چُلّھا
آن فِقیر تے کھا کھا جاوَن، راضِی ہووے بُلّھا

فرھنگ:

تھیّا تھیّا : رقص کا ایک انداز، جس میں ایڑی زمین پر ماری جاتی ہے۔
آپے : خود بخود۔
طبیبا : حکیم۔ محبوب۔
ہٹک : روک۔ منع۔
لاہُو : سیلِ رواں۔
مہانیاں : ملّا حاں۔ کشتی بان۔
جھنگی : درختوں کا ذخیرہ۔
چولے : لمبے کپڑے۔
ساوے : سبز۔
سُوہے : سُرخ۔
وھیّا : محبوب۔
اڈّی : ایڑی۔

دوہڑہ:
کَھڑکّے : آواز پیدا کرے۔
دُکّڑ وجّے : روٹی پکّے۔
تتّا : گرم۔

-----------------------------------------------------------

25۔ جِس تن لگیا عشق کمال

جِس تن لگیّا عشق کمال
ناچے بے سُر، تے بے تال

درد مند نوں کوئ نہ چھیڑے
جس نے آپے دُکھ سہیڑے
جمنا جیونا مُول اُکھیڑے
بُوجھے اپنا آپ خیال

جِس تن لگیّا عشق کمال
ناچے بے سُر، تے بے تال

جِس نے ویس عشق دا کیتا
دُھر درباروں فتوٰے لیتا
جدُوں حضُوروں پیالہ پیتا
کُجھ نہ رہیا جواب سوال

جِس تن لگیّا عشق کمال
ناچے بے سُر، تے بے تال

جِس دے اندر وسّیا یار
اُٹّھیا یار و یار پُکار
نہ اوہ چاہے راگ نہ تار
اینویں بیٹھا، کھیڈے حال

جِس تن لگیّا عشق کمال
ناچے بے سُر، تے بے تال

بُلّھیا! شَوہ نگر سچ پایا
جھُوٹھا رولا سبّھ مُکایا
سچّیاں کارن سچّ سُنایا
پایا اُس دا پاک جمال

جِس تن لگیّا عشق کمال
ناچے بے سُر، تے بے تال

فرھنگ:

سہیڑے : خود قبول کیے۔
ویس : لباس۔
دُھر درباروں : ازل سے۔
کُجھ نہ ہریا جواب سوال : بات ختم ہو گئی۔

-----------------------------------------------------------

26۔ جِند کُڑِکّی دے مُنہ آئ

جِند کُڑِکّی دے مُنہ آئ

عشق تُساڈا مینُوں دِسدا، پربت کولوں بھارا
اِک گھڑی دے دیکھن کارن، چُک لیا سِر سارا
محنت مِلے کہ مِلدی ناہیں؟ ڈاہڈے دی اشنائ

جِند کُڑِکّی دے مُنہ آئ

پاکاں دا ہے ہحی وسیلہ، میرے تُسِیں آپے وہ دو
جاگدیاں، سنگ میرے جاگو، سَونواں، نالے سءونوو
جِس نے تَیں سنگ پیت لگائ، کیہڑے سُکھ سَوائ

جِند کُڑِکّی دے مُنہ آئ

گَگ وِچ روشن نام تُساڈا، عاشق توں کیو نسدے ہو
وسّو رسّو وِچ بغل دے، اپنا بھیت نہ دسدے ہو
اَدھکڑے وِچاروں پھڑ کے، میں اُلٹی لٹکائ

جِند کُڑِکّی دے مُنہ آئ

فرھنگ:

جِند : جان۔
کُڑِکّی : جانوروش کے پھانسنے کا ایک تکلیف دہ آلہ، جس میں پنسنے سے جانور کا کوئ عضو ضائع ہو جاتا ہے یا وہ مر جاتا ہے۔ مقصد اِنتہائ مُصیبت میں۔
پربت : پہاڑ۔
ڈاہڈا : زبردست۔
اشنائ : دوستی۔
وسّو رسّو : آباد ہو۔
ادھکڑے وچکاروں : درمیان میں سے۔
محنت : مزدوری۔

-----------------------------------------------------------

27۔ جو رنگ رنگیا، گُوہڑا رنگیا

جو رنگ رنگیا، گُوہڑا رنگیا، مُرشد والی لالی، او یار

دُرِ معانی کع دھوم مچی ہے، نیناں توں گُھنڈ اُتھالیں او یار
زُلف سیاہ وِچ ہو یدِ بیضا، اوہ چمکار وِکھالِیں او یار
صُمُُّ بُکمُُ عُمیُُ ہوئیاں، لائیاں دی لَج پا للِیں او یار
مُوتُوا قَبلَ اَن تَمُوتُوا موئ نُوں، پھیر جَوالِیں او یار
اَوکھا جھیڑا عِشقے والا، سنبھل کے پیر ٹِکالیں او یار
ہر شے اندر تُوں آپے ہیں، آپے ویکھ وکھالِیں او یار
بُلّھیا! شوہ گھر میرے آیا، کر کر ناچ وِکھا لِیں او یار

جو رنگ رنگیا، گُوہڑا رنگیا، مُرشد والی لالی، او یار

فرھنگ:

گُوہڑا : گہرا۔
دُرّ معانی : معنی کے موتی۔ اللّہ کی نشانیاں۔
نیناں : آنکھیں۔
گُھنڈ : نقاب۔ پردہ۔
زُلف سیاہ : کالی زُلف۔ اندھیرا۔
ید بیضا : ہاتھ کا چمکنا۔ کہا جاتا ہے کہ یہ معجزہ حضرت موسٰی کو دیا گیا تھا۔ مُراد روشنی۔
صُمُُّ بُکمُُ عُمیُُ : گُونگا، بہرا، اندھا۔
مُوتُوا قَبلَ اَن تَمُوتُوا : مرنے سے پہلے مر جا۔
جوالیں : زندہ کر دیں۔
لج پال : عِزّت و شرم کی حفاظت کرنے والا۔ عِزّت کا محافظ۔

-----------------------------------------------------------

28۔ چُپ کر کے کریں گُزارا

چُپ کر کے کریں گُزارے نُوں

سچ سُن کے لوک نہ سہندے نیں
سچ آکھیے تے گَل پَیندے نیں
پھر سچّے پاس نہ بہندے نیں
سچ مِٹّھا عاشِق پیارے نُوں

سچ شرع کرے بربادی اے
سچ عاشق دے گھر شادی اے
سچ کردا نَوِیں ابادی اے
جیہا شرع طریقت ہارے نُوں

چُپ عاشِق نوں نہ ہُندی اے
جس آئ سچ سوگندی اے
جِس ماھل سُہاگ دی گندھی اے
چھڈ دُنیا کُوڑ پسارے نُوں

چُپ کر کے کریں گُزارے نُوں

فرھنگ:

سہندے نیں : برداشت کرتے ہیں۔
گَل پیندے نیں : لڑنے کو تیار ہو جاتے ہیں۔
طریقت ہارے : سالک۔ مُرید۔
سوگندی : خوشبو۔
ماہل : چرخے کی وہ ڈوری جو تکلے کو چلاتی ہے۔
سُہاگ : شادی۔ ملن۔
گندھی اے : بٹی ہوئ ہے۔

-----------------------------------------------------------

29۔ چلو دیکھیے اوس مستانڑے نُوں

چلو دیکھیے اوس مستانڑے نُوں
جِدھی ترِنجناں دے وِچ پئی اے دُھمّ
اوہ تے مَے وحدت وِچ رنگدا اے
نہیں پُچھدا ”ذات دے کیہ ہو تُم؟”

جِدھا شور، چوپھیر پیا پیندا اے
اوہ کول تیرے نِت رہندا اے
کِتے نَحنُ اَقرَبُ کہندا اے
کِتے آکھدا اے ”فِی اَنفُسِکُم”

چَھڈ جُھوٹھ بھَرم دِی پَستی نُوں
کر عِشق دِی قائم مستی نُوں
گئے پہنچ سَجَن دی بستی نُوں
جو ہوئے عُمُُ، بُکمُُ تے صُمّ

نہ تیرا اے نہ میرا اے
جگ فانی، چہگڑا جیڑا اے
بِنا مُرشد، رہبر کیہڑا اے
پڑھ: ”فَاذ کُرُونِی اَذ کُرکُم”

بُلّھے شاہ! ایہ بات اِشارے دِی
جِنھا لگّی تانگھ نظارے دِی
دِس پئی منزل ونجارے دِی
ہے یَد للّہُ فَوقَ اَیدِیکُم

شعر

بھرواسا کیہ اشنائی دا
ڈر لگدا بے پروائی دا

فرھنگ :

مستانڑا : دیوانہ۔ پاگل۔ سودائی۔ مستانہ۔
ترنجن : عورتوں کی وہ مجلس جہاں عورتیں مل کر چرخہ کاتتی ہیں۔
دُھم : مشہوری۔ شہرت۔
مے وحدت : خدا کی یکتائی کی شراب۔
چوپھیر : چاروں طرف۔
نِت : ہمیشہ۔
نَحنُ اَقرَبُ : بہت قریب ہے۔
فِی اَنفُسِکُم : تمھارے نفسوں میں۔
فَاذ کُرُونِی اَذ کُرکُم : تم مجھے یاد رکھو۔ میں تمھیں یاد رکھوں گا۔
تانگھ : خواہش۔ آرزُو۔
یَد للّہُ فَوقَ اَیدِیکُم : ان کے ہاتھ پر اللّہ کا ہاتھ ہے۔

شعر

بھرواسا : اُمّید۔
اشنائی : دوستی۔
بے پروائی : بے نیازی۔

-------------------------------------------------------------------------------

30۔ خلق تماشے آئی یار

خلق تماشے آئی یار

اَج کیہ کیتا؟ کل کِیہ کرنا، بھٹھ اساڈا آیا
ایسی واہ کیاری بیجی، چڑیاں کھیت ونجایا

اِک الانھبا سّیاں دا ہے، سُوجا ہے سنسار
ننگ نامُوس ایتھوں دے ایتھے، لاہ پگڑی بھوئیں مار

نڈھا کِردا، بڈھا کِردا، آپو اپنی واری
کیہ بی بی، کیہ باندی لونڈی، کیہ دھوبا بھٹھیاری

بُلّھا شَوہ نُوں دیکھن جاوے، آپ بہانہ کردا
گُونو گُونی بھانڈے گھڑ کے ٹھیکریاں کر دھر دا

ایہ تماشا دیکھ کے چل پَو، اگلا دیکھ بازار
واہ وا چھنج پئی دربار، خلق تماشے آئی یار

فرھنگ :

ونجایا : برباد کیا۔ اُجاڑ دیا۔ ضائع کیا۔
اُلانھبا : طعنہ۔ مہنا۔
سّیاں : سہیلیاں۔
سنسار : زمانہ۔
ننگ نامُوس : عزّت۔ حُرمت۔
پگڑی : دستار۔
بھوئیں : زمین۔
نڈّھا : جوان۔
کونُو گُونی : مختلف قسم کے۔ الگ الگ۔ رنگا رنگ۔
پہانڈے : برتن۔
گھڑ کے : بنا کر۔
چِھنج : کُشتی کا دنگل۔
واہ : ہل چلا کر۔

-------------------------------------------------------------------------------

31۔ دِل لوچے ماہی یار نُوں

دِل لوچے ماہی یار نوں

اِک ہَس ہَس گلّلاں کردیاں
اِک روندیاں دھوندیاں پھِردیاں
کہو پُھلی بسنت بہار نوں

دِل لوچے ماہی یار نوں

مَیں نھاتی دھوتی رہ گئی
کوئی گنڈھ سَجَن دل بہہ گئی
بھاہ لاویے، ہار سنگار نُوں

دِل لوجے ماہی یار نُوں

مَیں دُوتیاں گھائل کیتی آں
سُویاں گھیر جوپھیروں یِیتی آں
گھر آ ماہی دِیدار نُوں

دِل لوچے ماہی یار نوں

فرھنگ:

لوچے: چاہے۔ آرزو رکھے۔
دھوندیاں: بے کار۔
گنڈھ: گانٹھ۔ گرہ۔
بھاہ: آگ۔
دُوتی: دشمن۔ وَیری۔
سُویاں: کانٹے۔
چوپھیروں: چاروں طرف۔

-------------------------------------------------

32۔ ڈھلک گئی چرخے دِی ہتّھی

ڈھیلک گئی چرًے دی، ہتّھی، کتّیا مُول نہ جاوے
تکلے نُوں وَل پے پے جاندے، کون لُہار سداوے
تکلے نوں وَل لاہیں لُہارا، تندی ٹُٹ ٹُٹ جاوے
گھڑی گھڑی ایہ جھولے کھاندا، چھیّی اِک نہ لاہوے
پیتا نہیں جو بیڑی بنہاں، بائڑ ہتھ نہ آوے
چمڑیاں اُتے چوپڑ ناہِیں، ماہل پئی بڑلاوے
ڈِھلک گئی چرخے دی ہتّھی، کتّیا مُول نہ جاوے

دِن چڑھیا کَد گُزرے، مَینُوں پتارا مُکھ دِکھلاوے
ماہی چھِڑ گیا نال مہیں دے، کتّن کِس نُوں بھاوے
جِت ول یار اُتے ول اکھیاں، دِل ميرا بيلے دھاوے
تِنجن کتّن سدّن سيّاں، بِرہوں ڈھول وجاوے
عرض ايہو، مَينوں آن ملے ہُن، کون وسِيلہ جاوے
سے (100) مناں داکت ليا تُلّھا، مَينُوں شَوہ گل لاوے
دِن چڑھيا کد گُزرے، مَينُوں پيار مُنہ دِکھاوے

فرہاگ:

-------------------------------------------------

33۔ ”رانجھا رانجھا” کردی

”رانجھا رانجھا!” کردی، ہُن مَيں آپے رانجھا ہوئی
سدّو مَينُوں ”دِھيدو رانجھا،” ”ہِير” نہ آکھو کوئی

رانجھا مَيں وِچ، مَيں رانجھے وِچ، غَير خيال نہ کوئی
مَيں نہيں، اوہ آپ ہَے، اپنی آپ کرے دِلجوئی

جو کُجھ ساڈے اندر وَسّے، ذات اساڈی سوئی
جس دے نال ميں نِيُونَھ لگايا اوہو جيسی ہوئی

چٹّی چادر لاہ سُٹ کُڑيے، پہن فقِيراں لوئی
چٹّی چادر داغ لگيسی، لوئی داغ نہ کوئی

تخت ہزارے ہے چل بُلّھيا، سيالِيں مِلے نہ ڈھوئی
”رانجھا رانجھا!” کردی ہُن مَيں آپے رانجھا ہوئی


فرھنگ:

-------------------------------------------------

34۔ روزے، حج، نَماز نی مائے

روزے، حج، نماز نی مائے
مَينُوں پِيا نے آن بُھلائے
جاں پِيا دياں خبراں پئياں
منطِق، نحو سبھے بُھل گئياں
اُس انحد دے تار بجائے

روزے، حج، نماز نی مائے
مَينوں پِيا نے آن بھلائے

جاں پِيّا ميرے گھر آيا
بُھلّی مَينوں شرح وِقايہ
ہر مظہر وچ اوہا دِسدا
اندر باھر، جلوہ اُس دا
بُھلّے لوکاں، خبر نہ کائے

روزے، حج، نماز نی مائے
مَينوں پِيا نے آن بھلائے


فرھنگ:


-------------------------------------------------

35۔ سب اِکّو رنگ کپاہيں دا

سب اِکّو رنگ کپاہيں دا

تانی، تانا، پيٹا، نلياں
پيٹھ، اڑا، تے چھبّاں چھلياں
آپو اپنے نام جناون
وکھّو وکھّی جائيں دا

سب اِکّو رنگ کپاہيں دا

چَونسی، پَينسِی، کھدّر، دھوتر
ململ، خاسا اِکّا سُوتر
پُونی وِچوں باہر آوے
بھگوا بھيس کُسائيں دا

سب اِکّو رنگ کپاہيں دا

کُڑياں ہتھّيں، چھاپاں چھلّے
آپو اپنے نام سولّے
سبّھا اِکّا چاندی آکھو
کنگن، چُڑا باہِيں دا

سب اِکّو رنگ کپاہيں دا


فرھنگ:


-------------------------------------------------

شعر

بُلّھا پی شراب تے، کھا کباب، پر بال ہڈاں دی اَگ!
چوری کر، تے بَھن گھر رَبّ دا، اُس ٹھگاں تے ٹھگ نُوں ٹھگ

-------------------------------------------------

36۔ سَے (100) ونجار آئے

سَے ونجار آئے نی مائے، سَے ونجارے آئے
لا لاں دا اوہ وَنج کريندے، ہوکا آکھ سُنائے

سِنيا ہوکا، مَيں دِل گُزری، مَيں بھی لال لياواں
اِک نہ اِک کنّاں وِچ پا کے، لوکاں نوں دِکھلاواں

کچّی کچ، ويہاج نہ جاناں، لال ويہاجن چلّی
پلّے خرچ نہ، ساکھ نہ کائی، ديکھو ہارن چلّی

جاں مَيں مُلّ اونھاں توں پُچّھيا، مُلّ کرن اوہ بھارے
ڈمھ سُوئی دا کدے نہ کھاہدا، اوہ پُچھّن سِر بارے

جيہڑياں گئياں لال ويہاجن، اونھاں سِيس لہائے
سَے ونجار آئے نی مائے، سَے ونجار آئے


فرھنگ:


-------------------------------------------------

37۔ سيّو نی رَل ديو وَدھائی

سيّو نی رَل ديو ودھائی
مَيں بر پايا رانجھا ماہی

اَج تاں روز مُبارک چڑھيا
رانجھا ساڈے ويہڑے وڑيا
ہتھ کھونڈی، سِر کمبل دھريا
چاکاں والی شکل بنائی

مُکٹ گوال دے اندر رُلدا
جنگل جُوہاں وِچ کِس مُل دا
ہے کوئی اللّٰہ دے وَل بھُلدا؟
اصل حقيقت خبر نہ کائی

بُلّھے شاہ اِک سودا کِيتا
کِيتا، زھر پيالہ پِيتا
نہ کُجھ لاہا ٹوٹا لِيتا
دُکھ درداں دی گٹھڑی چائی

سيّو نی رل ديو وَدھائی
مَيں بر پايا رانجھا ماہی

-------------------------------------------------

شعر

دھرمسال دھڑوائی وسدے، ٹھاکر دوارے ٹھگ
وِچ مسِيت کوسِيتے رہندے، عاشِق رہن الگ!

-------------------------------------------------

38۔  عِشق دِی نَﯣيوں نَوِيں بہار

عِشق دِی نَويوں نويں بہار

جاں مَيں سبق عَشق دا پڑهيا
مسجِد کولوں جَيُوڑا ڈريا
پُچھ پُچھ ٹهاکر وَوارے وڑيا
جِتّهے وجدے ناد هزار

عِشق دِی نَويوں نويں بہار

ويد قُراناں پڑھ پڑھ تهکّے
سِجدے کردياں گهِس گئے متّهے
نہ ربّ تِيرتھ، نہ رب مکّے
جِس پايا تِس تُور انوار

عِشق دِی نَويوں نويں بہار

پُهوک مُصلّٰے بھَن سُٹ لوٹا
نہ پهڑ تسبِيح، عاصا، سوٹا
عاشِق کہندے دے دے ہوکا
ترک حلالوں، کھاه مُردار!

عِشق دِی نَويوں نويں بہار

ہِير رانجهے دے ہو گئے ميلے
بُهلّی ہِير، ڈهونڈيندی بيلے
رانجهن يار بغل وِچ کهيلے
سُرت نہ رہيّا، سُرت سنبهار!

عِشق دِی نَويوں نويں بہار

فرهنگ:


-------------------------------------------------
شعر

وصل ہوئياں مَيں نال سَجَن تے، شرم حيا نُوں گوا کے
وِچ چمن مَيں پلنگ وِچهايا، يار سُتی گل لا کے

-------------------------------------------------

39۔ عِلموں بسّ کريں او يار

عِلموں بسّ کريں او يار!
اِکّو الف تِرے درکار

عَلم نہ آوے وِچ شُمار!
جاندی عُمر، نہيں عِتبار
اِکّو الف تِرے درکار
عِلموں بسّ کريں او يار!

عِلموں بسّ کريں او يار!

پڑھ پڑھ، لِکھ لِکھ لاويں ڈهير
ڈهير کتاباں چار چوپهير
گِردے چانن، وِچّ انهير
پُچهو: ”راه؟” تے خبر، نہ سار

عِلموں بسّ کريں او يار!

پڑھ پڑھ نفل، نماز گزاريں
اُچّياں بانگاں، چانگاں ماريں
مِمبر تے چڑھ، وعظ پُکاريں
کِيتا تينُوں عِلم خوار

عِلموں بسّ کريں او يار!

عِلموں پئے قِضيّے ہور
اکّهاں والے انّهے کور
پهڑدے سادھ، تے چهڈن چور
دوہِيں جہانِيں، ہون خوار

عِلموں بسّ کريں او يار!

پڑھ پڑھ شيخ مشائِخ کہاويں
اُلٹے مَسلے گهروں بناويں
بے عِلماں نُوں لُٹ لُٹ کهاويں
جُھوٹے سچّے کريں اقرار

عِلموں بسّ کريں او يار!

پڑھ پڑھ مُلّاں ہوئے قاضی
اللّٰہ عَلماں باجهوں راضی
ہووے حِرص دِنوں دِن تازی
تينُوں کِيتا حِرص خوار

عِلموں بسّ کريں او يار!

پڑھ پڑھ مَسلے پِيا سُناويں
کهانا شکّ شُبهے دا کهاويں
دسّيں ہور، تے ہور کماويں
اندر کهوٹ، باہر سُچيار

عِلموں بسّ کريں او يار!

جَد مَيں سبَق عِشق دا پڑهيا
دريا ديکھ دحدت دا وڑيا
گهمّن گهيراں دے وِچ اڑيا
شاه عِنايت لايا پار!

عِلموں بسّ کريں او يار!

فرهنگ:


-------------------------------------------------

40۔